45 people have been killed after an explosion near the Wagah border Lahore

0 7

45 people have been killed after an explosion near the Wagah border Lahore

45 people have been killed after

Nearly 70 people have also reportedly been injured in the explosion.

The IG Punjab said the initial assessment of the blast is that it was the result of a suicide attack.

Journalists have been instructed to clear the area, which the Rangers have cordoned off for security reasons.

Footage shows shops and nearby buildings destroyed at the site of the blast.

Security and rescue personnel have rushed to the site of the blast. The injured have been rushed to hospital.

Emergency has been declared at all hospitals in Lahore. Prime Nawaz Sharif has taken notice of the explosion and called for a report on the incident.

Wagah is the only road border crossing between the Indian city of Amritsar and the Pakistani city of Lahore.

دھماکا واہگہ بارڈر پر پرچم اتارنے کی تقریب ختم ہونے کے بعد بارڈر کے قریب پارکنگ ایریا میں ہوا جس کے نتیجے میں بچوں اور رینجرز اہلکاروں سمیت 48 افراد جاں بحق ہوئے جن میں ایک ہی خاندان کے 8 افراد بھی شامل ہیں، دھماکے میں رینجرز اہلکاروں سمیت متعدد  افراد زخمی بھی ہوئے جبکہ بارڈر کے قریب واقع کئی دکانوں اور گاڑیوں کو بھی نقصان پہنچا، قانون نافذ کرنے والے اداروں نے دھماکے کے بعد جائے وقوعہ پر پہنچ کر علاقے کو گھیرے میں لے لیا جبکہ ریسکیو اہلکاروں نے زخمی افراد کو گھرکی اور سروسز اسپتال منتقل کردیا ہے جہاں انہیں طبی امداد فراہم کی جارہی ہے تاہم اسپتال ذرائع کا کہنا ہے کہ زخمیوں میں سے بھی بعض کی حالت تشویشناک ہے۔

دھماکے کے بعد لاہور کے تمام سرکاری اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی جب کہ گھرکی اسپتال جہاں لاشوں اور زخمیوں کو لایا گیا وہاں قیامت صغریٰ کے مناظر دیکھے گئے، لوگ اپنے پیاروں کی لاشوں سے لپٹ کر دھاڑیں مار مار کر روتے رہے جب کہ اسپتال انتظامیہ کی جانب سے شہریوں سے خون کے عطیات دینے کی اپیل کی گئی ہے، اسپتال میں جگہ کم پڑجانے کے باعث لاشوں کو پارکنگ ایریا میں رکھا گیا ہے۔

دوسری جانب آئی جی پنجاب مشتاق سکھیرا کے مطابق دھماکا خودکش تھا جس میں 5 کلو سے زائد بارودی مواد اور بڑی تعداد میں بال بیئرنگز استعمال کئے گئے۔ ان کا کہنا تھا کہ محرم الحرام کے حوالے سے صوبے بھر میں سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے ہیں لیکن انتظامات جیسے بھی ہوں خودکش حملے کا خطرہ ہمیشہ رہتا ہے، دھماکے کی ابتدائی رپورٹ وزیر اعلیٰ پنجاب شہبازشریف کو بھی ارسال کردی گئی ہے۔

Comments
Loading...